Monday, May 4, 2015

woh-sarwar-e-kishwar-e-risalat-lyrics


معراج نظم نذر گدا بحضور سلطان الانبیاعَلَیْہ اَفْضَلُ الصَّلٰوۃِ وَالثَّنَا
دَر تہنیت شادی اَسرا
وہ سرورِ کشورِ رِسالت جو عَرْش پَر جلوہ گَر ہوئے تھے
نَئے نِرالے طَرَب کے ساماں  عَرَب کے مہمان کے لئے تھے
بَہار ہے شادیاں  مبارک چَمَن کو آبادیاں  مبارک
مَلک فلک اپنی اپنی لے میں  یہ گھر عَنادِل کا بولتے تھے
وہاں  فلک پر یہاں  زمیں  میں  رَچی تھی شادی مچی تھی دُھومیں
اُدھر سے اَنوار ہنستے آتے اِدھر سے نَفْحات اُٹھ رہے تھے
یہ چُھوٹ پَڑتی تھی اُن کے رُخ کی کہ عَرْش تک چاندنی تھی چھٹکی
وہ رات کیا جگمگا رہی تھی جگہ جگہ نَصْب آئنے تھے
نئی دُلھن کی پَھبَن میں  کعبہ نکھر کے سَنورا سَنور کے نِکھرا
حَجَر کے صدقے کَمر کے اِک تِل میں  رنگ لاکھوں  بناؤ کے تھے
نَظَر میں  دُولھا کے پیارے جَلوے حَیا سے محراب سر جُھکائے
سیاہ پَردے کے مُنھ پر آنچل تَجلّی ذات بَحْت سے تھے
خُوشی کے بادَل اُمَنڈ کے آئے دِلوں  کے طاؤس رنگ لائے
وہ نَغْمۂ نَعت کا سَماں  تھا حَرْم کو خود وَجد آرہے تھے
یہ جُھوما مِیزابِ زَر کا جُھومَر کہ آرہا کان پَر ڈَھلک کر
پُھوہار بَرسی تو موتی جَھڑ کر حَطِیم کی گود میں  بَھرے تھے
دُلھن کی خوشبو سے مَسْت کپڑے نَسیم گُستاخ آنچلوں  سے
غلافِ مُشکیں  جو اُڑ رہا تھا غَزال نافے بَسا رہے تھے
پہاڑیوں  کا وہ حُسْنِ تَزئیں  وہ اُونچی چوٹی وہ نازو تَمْکِیں!
صَبا سے سبزہ میں  لہریں  آتیں  دُوپٹے دَھانی چُنے ہوئے تھے
نَہا کے نہروں  نے وہ چمکتا لباس آبِ رَواں  کا پہنا
کہ موجیں  چَھڑیاں  تھیں  دَھار لَچکا حبابِ تاباں  کے تَھل ٹَکے تھے
پرانا پر داغ مَلگَجا تھا اُٹھا دیا فرش چاندنی کا
ہُجومِ تارِ نِگَہ سے کوسوں  قَدَم قَدَم فَرش بَادْلے تھے
غُبار بَن کر نِثار جائیں  کہاں  اَب اُس رَہ گُزَر کو پائیں
ہمارے دل حُوریوں  کی آنکھیں  فرشتوں  کے پَر جہاں  بچھے تھے
خدا ہی دے صبر جانِ پر غَم دِکھاؤں  کیوں  کر تجھے وہ عالم
جَب اُن کو جُھرمَٹ میں  لے کے قُدسی جِناں  کا دُولھا بنا رہے تھے
اُتار کر اُن کے رُخ کا صَدقہ یہ نور کا بَٹ رہا تھا باڑا
کہ چاند سُورج مَچَل مَچَل کر جَبِیں  کی خَیرات مانگتے تھے
وُہی تو اب تک چھلک رہا ہے وُہی تو جَوْبَن ٹپک رہا ہے
نَہانے میں  جو گرا تھا پانی کٹورے تاروں  نے بھر لیے تھے
بَچا جو تَلووں  کا اُن کے دَھووَن بنا وہ جَنّت کا رنگ و رَوغَن
جِنھوں  نے دُولھا کی پائی اُترَن وہ پُھول گُلزارِ نُور کے تھے
خَبَر یہ تَحوِیل مہر کی تھی کہ رُت سُہَانی گھڑی پِھرے گی
وہاں  کی پوشاک زیب تن کی یہاں  کا جوڑا بڑھا چکے تھے
تجلّیِ حق کا سہرا سر پر صلوٰۃ و تسلیم کی نچھاوَر
دو رویہ قُدسی پَرے جما کر کھڑے سلامی کے واسطے تھے
جو ہم بھی واں  ہوتے خاکِ گلشن لپٹ کے قدموں  سے لیتے اُترن
مگر کریں  کیا نصیب میں  تو یہ نامُرادی کے دِن لکھے تھے
ابھی نہ آئے تھے پشت زیں  تک کہ سَر ہوئی مغفرت کی شِلِّک
صَدا شفاعت نے دی مُبارک! گناہ مستانہ جھومتے تھے
عَجَب نہ تھا رَخش کا چمکنا غَزالِ دَم خُوردَہ سا بَھڑکنا
شُعاعیں  بُکے اُڑا رہی تھیں  تڑپتے آنکھوں  پہ صاعقے تھے
ہجومِ اُمید ہے گھٹاؤ مُرادیں  دے کر انھیں  ہٹاؤ
اَدَب کی باگیں  لیے بڑھاؤ ملائکہ میں  یہ غُلْغُلے تھے
اُٹھی جو گردِ رہِ مُنوَّر وہ نور برسا کہ راستے بھر
گھرے تھے بادل بھرے تھے جل تھل اُمَنڈ کے جنگل اُبل رہے تھے
سِتَم کیا کیسی مَت کٹی تھی قمر! وہ خاک اُن کے رَہ گزر کی
اُٹھا نہ لایا کہ ملتے ملتے یہ داغ سب دیکھتا مٹے تھے
براق کے نقشِ سم کے صدقے وہ گل کھلائے کہ سارے رَستے
مہکتے گلبن لہکتے گلشن ہَرے بھرے لہلہا رہے تھے
نمازِ اَقصٰی میں  تھا یہی سِرّ عیاں  ہوں  مَعنیِ اَوَّل آخر
کہ دَست بستہ ہیں  پیچھے حاضر جو سلطنت آگے کر گئے تھے
یہ اُن کی آمد کا دَبدبہ تھا نکھار ہر شَے کا ہو رہا تھا
نجوم و افلاک جام و مِینا اُجالتے تھے کھنگالتے تھے
نقاب اُلٹے وہ مہر اَنور جلالِ رُخسار گرمیوں  پر
فلک کو ہیبت سے تپ چڑھی تھی تپکْتے اَنجُم کے آبلے تھے
یہ جوشِشِ نور کا اَثر تھاکہ آبِ گوہر کمر کمر تھا
صفائے رہ سے پھسل پھسل کر ستارے قدموں  پہ لوٹتے تھے
بڑھا یہ لہرا کے بحر وَحدت کہ دُھل گیا نامِ ریگ کثرت
فلک کے ٹِیلوں  کی کیا حقیقت یہ عرش و کرسی دو بُلبُلے تھے
وہ ظِلِ رَحمت وہ رُخ کے جلوے کہ تارے چھپتے نہ کھلنے پاتے
سنہری زَرْبَفْت اُودِی اَطلس یہ تھان سب دُھوپ چھاؤں  کے تھے
چلاوہ سروِ چَمَاں  خراماں  نہ رُک سکا سدرہ سے بھی دَاماں
پلک جھپکتی رہی وہ کب کے سب اِین وآں  سے گزر چکے تھے
جھلک سی اِک قدسیوں  پر آئی ہوا بھی دامن کی پھرنہ پائی
سواری دُولھا کی دُور پہنچی برات میں  ہوش ہی گئے تھے
تھکے تھے رُ وْح ُالا َ مِیں  کے بازُو چھٹا وہ دامن کہاں  وہ پہلو
رِکاب چھوٹی اُمید ٹوٹی نگاہِ حسرت کے وَلولے تھے
رَوِش کی گرمی کو جس نے سوچا دِماغ سے اِک بھبو کا پھُوٹا
خرد کے جنگل میں  پھول چمکا دَہر دَہر پیڑ جل رہے تھے
جِلو میں  جو مرغِ عقل اُڑے تھے عجب برے حالوں  گرتے پڑتے
وہ سدرہ ہی پر رَہے تھے تھک کر چڑھا تھا دَم تیور آگئے تھے
قوی تھے مرغانِ وَہم کے پَر اُڑے تو اُڑنے کو اَور دَم بھر
اُٹھائی سینے کی ایسی ٹھوکر کہ خونِ اَندیشہ تھوکتے تھے
سنا یہ اتنے میں  عرشِ حق نے کہ لے مبارک ہوں  تاج والے
وہی قدم خیر سے پھر آئے جو پہلے تاجِ شرف تِرے تھے
یہ سن کے بے خود پکار اُٹھا نثار جاؤں  کہاں  ہیں  آقا
پھر ان کے تلووں  کا پاؤں  بوسہ یہ میری آنکھوں  کے دِن پھرے تھے
جھکا تھا مجرے کو عرشِ اَعلیٰ گرے تھے سجدے میں  بزمِ بالا
یہ آنکھیں  قدموں  سے مَل رہا تھا وہ گرد قربان ہورہے تھے
ضیائیں  کچھ عرش پر یہ آئیں  کہ ساری قندیلیں  جھلملائیں
حضورِ خورشید کیا چمکتے چراغ منھ اپنا دیکھتے تھے
یہی سَمَاں  تھا کہ پَیکِ رحمت خبر یہ لایا کہ چلیے حضرت
تمہاری خاطر کشادہ ہیں  جو کلیم پر بند راستے تھے
بڑھ  اے  محمد  قریں   ہو  احمد  قریب  آ  سرورِ  مُمَجَّد
نثار جاؤں  یہ کیا ندا تھی یہ کیا سَمَاں  تھا یہ کیا مزے تھے
تَبَارَکَ  اللہ شان تیری تجھی کو زیبا ہے بے نیازی
کہیں  تو وہ جوشِ  لَنْ  تَرَانِی کہیں  تقاضے وِصال کے تھے
خرد سے کہدو کہ سر جھکا لے گماں  سے گزرے گزرنے والے
پڑے ہیں  یاں  خود جِہَت کو لالے کسے بتائے کدھر گئے تھے
سُراغ اَین و متیٰ کہاں  تھا نشانِ کیف و اِلیٰ کہاں  تھا
نہ کوئی راہی نہ کوئی ساتھی نہ سنگِ منزل نہ مرحلے تھے
اُدھر سے پیہم تقاضے آنا اِدھر تھا مشکل قَدَم بڑھانا
جلال وہیبت کا سامنا تھا جمال و رحمت اُبھارتے تھے
بڑھے تو لیکن جھجھکتے ڈرتے حیا سے جُھکتے ادب سے رکتے
جو قرب انھیں  کی رَوِش پہ رکھتے تو لاکھوں  منزل کے فاصلے تھے
پر ان کا بڑھنا تو نام کو تھا حقیقۃً فِعل تھا اُدھر کا
تَنَزُّلوں   میں   ترقی   اَفزا   دَنیٰ  تَدَلّٰے  کے  سلسلے  تھے
ہوا  نہ  آخر  کہ  ایک  بجْرا  تَمَوُّجِ  بحر  ہُو  میں   اُبھرا
دَنیٰ کی گودی میں  ان کو لے کر فنا کے لنگراُٹھا دِیے تھے
کسے ملے گھاٹ کا کنارا کدھر سے گزرا کہاں  اُتارا
بھرا جو مثل نظر طرارا وہ اپنی آنکھوں  سے خود چھپے تھے
اُٹھے جو قصرِدنیٰ کے پردے کوئی خبر دے تو کیا خبر دے
وہاں  تو جاہی نہیں  دُوئی کی نہ کہہ کہ وہ بھی نہ تھے ارے تھے
وہ باغ کچھ ایسا رنگ لایا کہ غنچَہ و گل کا فرق اُٹھایا
گرہ میں  کلیوں  کی باغ پھولے گلوں  کے تکمے لگے ہوئے تھے
محیط و مرکز میں  فرق مشکل رہے نہ فاصِل خطوط واصِل
کمانیں  حیرت میں  سر جھکائے عجیب چَکر میں  دائرے تھے
حجاب اٹھنے میں  لاکھوں  پردے ہرایک پر دے میں  لاکھوں  جلوے
عجب گھڑی تھی کہ وصل و فرقت جنم کے بچھڑے گلے ملے تھے
زبانیں  سوکھی دکھا کے موجیں  تڑپ رہی تھیں  کہ پانی پائیں
بھنور کو یہ ضعف تشنگی تھا کہ حلقے آنکھوں  میں  پڑ گئے تھے
وہی ہے اوّل وہی ہے آخر وہی ہے باطن وہی ہے ظاہر
اُسی کے جلوے اُسی سے ملنے اُسی سے اُس کی طرف گئے تھے
کمانِ امکاں  کے جھوٹے نقطو تم اوّل آخر کے پھیرمیں  ہو
محیط کی چال سے تو پوچھو کدھر سے آئے کدھر گئے تھے
ادھر سے تھیں  نذرشہ نمازیں  ادھر سے انعامِ خسروی میں
سلام و رحمت کے ہار گندھ کر گلوئے پر نور میں  پڑے تھے
زبان کو اِنتظارِ گُفْتَن تو گوش کو حسرتِ شنیدن
یہاں  جو کہنا تھا کہہ لیا تھا جو بات سننی تھی سن چکے تھے
وہ برج بطحا کا مَاہ پارہ بہشت کی سَیر کو سدھارا
چمک پہ تھا خلد کا ستارہ کہ اس قمر کے قدم گئے تھے
سرور مَقْدَم کی روشنی تھی کہ تابشوں  سے مہِ عرب کی
جناں  کے گلشن تھے جھاڑ فرشی جو پھول تھے سب کنول بنے تھے
طرب کی نازِش کہ ہاں  لچکیے اَدَب وہ بندش کہ ہل نہ سکیے
یہ جوشِ ضِدَّین تھا کہ پودے کشاکشِ اَرَّہ کے تلے تھے
خدا کی قدرت کہ چاند حق کے کروروں  منزل میں  جلوہ کرکے
ابھی نہ تاروں  کی چھاؤں  بدلی کہ نور کے تڑکے آلیے تھے
نبی  رحمت  شفیعِ   اُمّت!   رضاؔ  پہ  لِلہ   ہو  عنایت
اسے بھی ان خلعتوں  سے حصہ جو خاص رَحمت کے واں  بٹے تھے
ثنائے سرکار ہے وَظیفہ قبولِ سَرکار ہے تَمَنَّا
نہ شاعری کی ہوس نہ پَروا رَوِی تھی کیا کیسے قافیے تھے