Tuesday, September 5, 2017

آم کی چوری پر کیا کوئی مالک اتنا بھی مار سکتا ہے ؟


ﺍﯾﮏ ﭼﻮﺭ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﻍ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺲ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺁﻡ ﮐﮯ ﺩﺭﺧﺖ ﭘﺮ ﭼﮍﮪ ﮐﺮ ﺁﻡ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﻟﮕﺎ
باغ کے مالک نے اسے دیکھ لیا ﺍﻭﺭ ﭼﻮﺭ ﺳﮯ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ  : تمہیں شرم نہیں آتی  چوری کے آم کھاتے ہو  ؟
ﭼﻮﺭ ﻣﺴﮑﺮﺍﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﻮﻻ : شرم کس بات کی ۔۔۔؟
ﯾﮧ ﺑﺎﻍ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﺑﻨﺪﮦ ﮨﻮﮞ ، ﻭﮦ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﮭﻼ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ ، یہ سب اس کے حکم سے ہو رہا ہے  ، ﻭﺭﻧﮧ ﺗﻮ ﭘﺘّ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺣﮑﻢ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﺣﺮﮐﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ کتا ۔
مالک ﻧﮯ ﭼﻮﺭ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ
                                  ﺟﻨﺎﺏ ! ﺁﭖ کی اس بات نے میری عقل ٹھکانے پر لگا دی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺫﺭﺍ ﻧﯿﭽﮯ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻻﺋﯿﮯ ﺗﺎﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﺟﯿﺴﮯ نیک شخص  ے پاؤں چوموں  ۔۔۔۔  ﺍﺱ ﺟﮩﺎﻟﺖ ﮐﮯ ﺩﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﺟﯿﺴﮯ حکمت بھری سوچ رکھنے والے لوگ بھی موجود ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﻣﺠﮭﮯ ﺗﻮ ﻣﺪﺕ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﯾﮧ ﻧﮑﺘﮧ سمجھ آیا  ﮬﮯ کہ ﺟﻮ ﮐﺮﺗﺎ ﮬﮯ ۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺧﺪﺍ ﮨﯽ ﮐﺮﺗﺎ ﮬﮯ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺍﻭﺭ ﺑﻨﺪﮮ ﮐﺎ ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ۔۔۔۔۔۔ حضور ﺫﺭﺍ ﻧﯿﭽﮯ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻻﺋﯿﮯ ۔۔۔۔۔۔
ﭼﻮﺭ ﺍﭘﻨﯽ ﺗﻌﺮﯾﻒ ﺳﻦ ﮐﺮ بہت خوش ہوا ﺍﻭﺭ جلدی ﺳﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﺍﺗﺮ ﺁﯾﺎ ۔
                                       ﺟﺐ ﻭﮦ ﻧﯿﭽﮯ ﺁﯾﺎ ﺗﻮ مالک ﻧﮯ ﺍﺳﮑﻮ ﭘﮑﮍ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺭﺳﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺩﺭﺧﺖ ﺳﮯ ﺑﺎﻧﺪﮪ ﺩﯾﺎ ۔ پہلے تو لاتوں اور مکوں سے مارا  پھرﺟﺐ ﮈﻧﮉﺍ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ ﺗﻮ چور یخنے لگا کہ ﻇﺎﻟﻢ ﮐﭽﮫ ﺗﻮ ﺭﺣﻢ ﮐﺮ ، ﻣﯿﺮﺍ ﺍﺗﻨﺎ بڑا ﺟﺮﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺘﻨﺎ ﺗﻮ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﺎﺭ ﻟﯿﺎ ﮨﮯ ۔
                                تو مالک ہنس کر کہنے لگا ﮐﮧ ﺟﻨﺎﺏ ﺍﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﺁﭖ ﻧﮯکہا ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺟﻮ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ، ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺣﮑﻢ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ ، ﺍﮔﺮ ﭘﮭﻞ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﺑﻨﺪﮦ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﻣﺎﺭﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﺑﻨﺪﮦ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺣﮑﻢ ﺳﮯ ﮨﯽ ﻣﺎﺭ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺣﮑﻢ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﺗﻮ ﭘﺘﮧ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻠﺘﺎ ۔
            ﭼﻮﺭ ﮨﺎﺗﮫ ﺟﻮﮌ ﮐﺮ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺧﺪﺍﺭﺍ ﻣﺠﮭﮯ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﮮ ۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺍﺻﻞ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﻣﯿﺮﯼ ﺳﻤﺠﮫ ﻣﯿﮟ ﺁﮔﯿﺎ ﮬﮯ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﮐﮧ ﺑﻨدے کو ایک طرح کا اختیار دیا گیا ہے کہ اپنی مرضی سے اچھے یا برے کا انتخاب کرتا ہے ۔
                      مالک ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﯽ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺍﭼﮭﮯ ﯾﺎ ﺑﺮﮮ ﮐﺎﻡ ﮐﺎ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﺑﮭﯽ ہے کہ اچھا کرے گا تو انعام پائے گا برا کرے گا تو سزا پائے گا ۔
‏(ﺣﮑﺎﯾﺖ رومی)
جی ہاں : اﷲ تعالیٰ نے آدمی کو مثلِ پتھر اور دیگر جمادات کے بے حس و حرکت نہیں پیدا کیا، بلکہ اس کو ایک ایک طرح کا اختیاردیا ہے کہ ایک کام چاہے کرے، چاہے نہ کرے اور اس کے ساتھ ہی عقل بھی دی ہے کہ بھلے، بُرے، نفع، نقصان کو پہچان سکے اور ہر قسم کے سامان اور اسباب مہیا کر دیے ہیں، کہ جب کوئی کام کرنا چاہتا ہے اُسی قسم کے سامان مہیّا ہو جاتے ہیں اور اسی بنا پر اُس پر مؤاخذہ ہے